ملک کی ترقی مذہبی رواداری و آپسی بھائی چارہ سے ہی ممکن ہے، سدھیرنیدرا کلکرنی

Posted in National

ممبئی، 9 فروری.

(پی ایس آئی)

 ایسو سی ایشن آف مسلم پروفیشنلس کے ساتھویں سالانہ جلسہ کا کامیاب انعقاد صابو صدیق انجیئرنگ کالج گراو¿نڈ میں ہوا۔ 

اے ایم پی طلباءاور نوجوانوں میں تعلیمی بیداری و روزگار کی فراہمی کیلئے سرگرمی سے کام کررہی ہے ۔ ملک بھر میں مختلف شہروں میں اسی سلسلے کا کام کر تی ہے جس میں تعلیمی سمینار ، ورکشاپ اور نوکری میلہ شامل ہیں۔ اے ایم پی انڈیا کے ساتھویں سا لانہ جلسہ میں اے آئی سی سی جنرل سیکریٹری دگ وجئے سنگھ نے مہمان خصوصی کے طور پر شرکت کی۔جلسہ کی صدارت مشہور عالم دین و جامعہ اشرفیہ قادری کے روح رواں حضرت مولانا معین میاں صاحب نے فرمائی۔ پروگرام کی نظامت مشہور سماجی کارکن سعید خان نے بخوبی نبھائی۔ اس پروگرام میں شہر بھر کے مشہور ومعروف سیاسی، سماجی و تعلیمی شخصیات بھی موجود تھیں۔ ایم ایل اے امین پٹیل، سابق ایم ایل اے بابا صدیقی ،سابق ایم ایل اے و مہاڈا چیئرمن یوسف ابرا ہنی ، عبدالقدر سوپاری والا، وی آر شریف، ڈاکٹر پیٹنکر ، سہیل کھنڈوانی ودیگر مہمان شامل ہیں۔ 

اے ایم پی نے اپنے اس جلسہ میں تنظیم کی مدد کرنے والے ۹ لوگوں کی پزیرائی کرتے ہوئے۔ انھیں ایوارڈ سے نوازا۔ جن میں امتیازاحمد، یوسف ابرا ہنی، ظہیر قاضی، عزیز مکی وغیرہ کے نام شامل ہیں۔ اپنے خطاب میں کانگریس جنرل سیکریٹری دگ وجئے سنگھ نے اے ایم پی اور اس کے کام کی پزیرائی کرتے ہوئے کہا کہ مسلمانوں میں تعلیمی بیداری کے کام کو ااور آگے لے جانے کی ضرورت ہے۔ انھوں نے مزید کہاکہ ضرورت اس بات کی ہے کہ ملک میں موجود ساری اقوام مل جل کر ایک دوسرے کا ساتھ دیں۔ دگ وجئے سنگھ نے کہا کہ وہ ملک کے ہر حصے میں اے ایم پی کی مدد کرنے نے کوشش کریں گے۔ 

اے ایم پی کے صدر عام ادریسی نے اپنی آرگنائزیشن کے کام کاج اور اس کے سامنے پیش آنے والی دشورایوں کو بیان کیا ۔ عامر ادریسی نے بتایا کہ اے ایم پی گذشتہ ساتھ سالوں میں ملک میں ۰۵ بڑے شہروں تک اپنا پیغام پہنچانے میں کامیاب ہوئی ہے۔ اور پچھلے ڈیڑھ سالوں میں ۵ ہزار مسلم نوجوانوں کو روزگار دلانے میں معین و مدد گار ثابت ہوئی ہے۔ تادم ۰۵ ہزار کے آس پاس کالیفایڈ مسلم یوتھ آرگنائزیشن سے جوڑے ہوئے ہیں۔ ساتھ ہی انھوں نے دگ وجے سنگھ کی مسلمانوں کی جانب سے ہمدردی کیلئے شکریہ ادا کیا۔ اور ساتھ ہی کہا کہ اگر آپ جیسے سیاسی لوگوں کا تعاون رہا تو آنے والے دنوں میں ملک کے کونے کونے تک ہم اپنے کام کو لے جا پائیں گے۔ 

اس موقع پر ایڈوکیٹ یوسف ابر ا ہنی نے کہا کہ ہماری قوم رو¿سا کو بیدار ہونے کی ضرورت ہے۔ آج جو چیزیں و ادار ے ہم استعمال کرتے ہیں۔ فیضیاب ہوتے ہیں و دراصل سو سال قبل ہمارے بزرگوں کی دین ہیں۔ لہٰذا آج ہمیں یہ بیڑا اٹھانا ہو گا اور قوم کے غربا کو ساتھ لے کر آگے بڑھنا ہو گا۔ آبزرورریسرچ فاو¿نڈیشن کے چیئرمن اور اتل بہار سرکار میں وزیر اعظم کے مشیر سدھیرنا کلکرنی کا بھی اے ایم پی کی جانب سے خیر مقدم کیا گےا۔ اس موقع پر انھوں نے کہا کہ مسلمانوں کو علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی طرح دس یونیورسٹی کی ضرورت ہے۔ لہٰذا سرکار کو چاہئے کہ اسماعیل یوسف کالج کی جگہ مسلمانوں کو دیں۔ اور اس حق کیلئے مسلمانوں کو اپنی آواز بلند کرنی چاہئے۔ پروگرام میں مہاراشٹرا کے ویز اعلیٰ دیوینڈر فڑنویس کی اہلیا امرتا فڈنویس بھی موجود تھی۔ ساتھ انھوں نے اے ایم پی کیلئے اپنا پیغام بھیجا۔ پروگرام کی شروعات کلچرل سیزن سے ہوئی جس کی نظامت روبینہ فیروز نے کی۔ اور اس میں شہر کی مختلف اسکولوں و کالجوں کے طلباءنے پروگرام پیش کیا۔ خصوصی طور پر انجمن خیرلاسلام مدن پورہ ، مہاراشٹرا کالج، حبیب کالج کے طلباءنے رنگا رنگ پروگرام پیش کیا۔ گوونڈی کے مدرسہ حسنیہ کے طلباءنے ایک بہت ہی شاندارو جذباتی نظم پیش کی۔ پروگرام میں آئیڈیا ڈرامہ گروپ کی جانب سے ایک ڈرامہ نشے کا ناش کے عنوان سے پیش کیا گےا ۔پروگرام کے اختتام پر حضرت مولانا معین میاں نے دعا کی اور طلباءنے قومی ترانہ گا کر پروگرام کا اختتام کیا۔ 

 

Блогът Click here очаквайте скоро..

Full premium Here download theme for CMS

Bookmaker Bet365.gr The best odds.