شادی سے پہلے جنسی تعلق بنائیں،تو بن جائیں گے شوہر بیوی: ہائی کورٹ

Posted in National

چنئی، 18 جون۔

(پی ایس آئی)

مدراس ہائی کورٹ نے شادی سے پہلے سیکس کی نئی تشریح کی ہے۔ اس سے لو ان ریلیشن شپ میں نیا موڑ آ سکتا ہے۔

عدالت نے کہا ہے کہ اگر شادی کے پہلے 2 بالغ سیکس کرتے ہیں تو اسے جائز شادی قرار دیا جائے گا اور دونوں کو شوہر بیوی کا اعلان کیا جا سکتا ہے۔جسٹس سی ایس کرنان نے اپنے حکم میں کہا کہ اگر 21 سال کی عمر پار کر چکے کنوارے مرد اور 18 سال پار کر چکی لڑکی کے درمیان باہمی رضامندی سے سیکس ہوتا ہے تو ان دونوں کو شوہر بیوی کہا جا سکتا ہے۔ تاہم، بعض صورتوں میں رعایت ضرور ہو سکتی ہے۔

کرنان نے کہا کہ منگل نسوتر، ورمالا، انگوٹی وغیرہ پہننے جیسی ازدواجی خامیاں صرف سماج کے اطمینان کے لئے ہوتی ہیں۔ کوئی بھی فریق جنسی تعلق کے بارے میں دستاویزی ثبوت پیش کر کے ازدواجی تعلقات کا درجہ حاصل کرنے کے لئے خاندان عدالت سے رابطہ کر سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک بار ایسااعلان ہو جانے کے بعد کپل کسی بھی سرکاری ریکارڈ میں شوہر بیوی کے طور پر قائم ہو سکتے ہیں۔ہائی کورٹ نے کویمبٹور کے گزارا الاو¿نس متعلق معاملہ کی سماعت کرتے ہوئے یہ نظام دیا۔

 

Блогът Click here очаквайте скоро..

Full premium Here download theme for CMS

Bookmaker Bet365.gr The best odds.